جرمنی کے شہر بون میں ورلڈ میڈیا کانفرنس کا انعقاد

جرمنی کے شہر بون میں ڈوئچے ويلے کے زیر اہتمام ورلڈ کانفرنس سنٹر میں گلوبل میڈیا فورم کا اغاز ھوگیا فورم میں دنیا بھر سے ہزاروں صحافیوں ،مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والے مصنف و ہدایتکارشریک ھےاس موقع پر جرمن وزیر اکنامکس و توانائی، حکومتی نمائندوں اور بون شہر کے میئر، ڈوئچے ويلے کے سربراہ پیٹر لمبورگ شرکاء میڈیا فورم کو خوش آمدید کہاجبکہ فورم کے آغاز میں سابق جرمن چانسلر ہلموٹ کوہل کو خراج عقیدت پیش کرنے کے لیے کھڑے ہوکر چند لمحات کے لیے خاموشی اختیار کی گی سابق چانسلر کا گزشتہ سال انتقال ہوگیا تھا

اس موقع پر بون شہر کے میئر اشوک سردہارن نے دنیا بھر کے صحافیوں کو بون شہر امد اور میڈیا کانفرینس میں خوش امد کہتے ھوئے مختصر اظہار خیال کیا بعد ازیں جرمن کے وفاقی وزیر اقتصادی امور وتوانائی برگیٹلے سپریس نے اپنے خیالات کا اظہار کیا اور میڈیا کے کردار اور جرمنی کے اقتصادی پوزیشن، مہاجرین کے مسائل پر مختصر خطاب کیا اس موقع پر یونیسیف انفارمیشن کمیونیکشن کے ڈائریکٹر جنرل فلنک رائے روئے نے خطاب کرتے ھوئے کہا کہ دنیا میں ابھی تک ہمیں سات ہزار سے زائد زبانیں کے بارے میں معلومات حاصل ھوچکی ھے شاید اور بھی زبانیں ھوالبتہ

کروڑوں افراد کو صاف پانی اور خوراک ہیلتھ سمیت دیگر مسائل کا سامنا ھے اور میڈیا کے زریعے ہی مسائل کے اگاہی ملتی ھے اس موقع پر سوشل میڈیا کو نیوز اور ایسکلوزیو خبروں کے لیے استعمال کرنے کے موضوع پر سی این این کے ڈیجیٹل پروڈیوسر یوسف عمر نے اپنے بنائے ھوئے نیوز ویب پر روشنی ڈالی اور سوشل میڈیا کو خبروں کے لیے استعمال کرنے پر ضرور دیا واضع رہے کہ میڈیا فورم کا یہ کانفرنس تین روز تک جاری رہے گا جس میں مختلف موضوعات پر تقریریں، ورکشاپس اور مذاکرے کا انعقاد کیا گیا ھے ڈوئچے ویلے کا یہ میڈیا کانفرنس کو صحافتی شناخت کا نام دیا گیا ھے

   بون رپورٹ : مطیع اللہ احمد

اړوندې ليکنې د ليکوال نورې ليکنې

تبصره وليکئ

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.