شمالي وزیرستان کې حکومت د یو کس په جرم کې شپیته کسان دننه کړي

د ټی این این د راپور په اساس په جنوبي وزيرستان کښي تيره مياشت ايجنسي هيډ کوارټرهسپتال او نادرا دفتر کښي د اوور لګيدو دري پيښو نه پس د علاقائي ذمه وارئ لاندي د کرمز خيل قبيلي شپيته کسان ګرفتارکړے شوي دي۔ د وانا اسسټنټ پوليټيکل ايجنټ کامران خان وينا ده چي نيولي شوي شپيته کسانو کښي پنځه څلويښت ډي آئي خان جيل ته منتقل کړے شوي دي۔ دوي زياته کړي ده چي په کومو خلقو ئي شک وو نو ټول ئي نيولي دي او په دي حقله پلټني رواني دي چي کوم خلق پيښو کښي ګړوي هغوي ته به سزا ورکولي شي ولي نوربه خوشي کولي شي۔
د ګرفتارو په حقله يو سماجي کارکن علي وزيروينا ده چي دا قسمه ګرفتارو سره د خلقو ذهنونه تشډ طرف ته مائل کيږي او دا چي نيولي شوي کسانو کښي طالبعلمان، ډاکټران او انجنيئران هم شامل دي ولي حکومت دي بي ګناه خلق رها کړي۔
بل اړخ ته د کرمي ايجنسئ انتظاميي هم شور کو سيمه کښي د حدود ذمه وارئ لاندي دري کسان نيولي دي۔ ياده دي وي چي دغه سيمه کښي څو ورځي وړاندي پرله پسي دري بمي چاودني شوي وي چي پکښي دوه سکيورټي اهلکارمړه او پنځه زخمي شوي وو

اړوندې ليکنې د ليکوال نورې ليکنې

1 تبصره

  1. Abdur rauf khan وايي

    زیر نظر تصویر میں ایک Eye Specialist ڈاکٹر نور حسن وزیر اور ایک نویں جماعت کا طالبعلم جیل کے سلاخوں کے پیچھے نظر ارہے ہیں.

    غلطی صرف انکی اتنی ھے کہ یہ وزیر کرمزخیل ھے اور اجتماعی 40FCR قانون کے تحت انکو سلاخوں کے پیچھے ڈالے گئے ھیں.

    یاد رھے کہ نامعلوم افراد نے پچھلے مہینے ھسپتال کے ایمبولینس جلائے تھے اور اب کرمز خیل قوم کے جوان، بوڑھے، بچے مطلب سب کو جیل میں بند کیا جا رھا ھے. اور الزام صرف اتنا ھے کہ یہ واقعہ ان کے علاقے میں ھوا ھے اور انھوں نے یہ واقعہ کیوں نہیں روکا. تو کیا ساتھ والے چوکی پر مامور خاصہ دار وغیرہ یہ واقعہ نہیں دیکھ رھے تھے اور کیا وہ اسکو بھی روک سکتے تھے. یاد رھے کہ قبائیل سے سارہ اسلحہ وغیرہ جمع کیا گیا ھے. تو کیا خالی ھاتھ والے دفاع اور حفاظت بہتر کرسکتے ھیں یا وردی اور اسلحے والے.
    گھروں پر سیکیورٹی فورسز چھاپے مار رھے ھیں اور در و دیوار کی عزت کو حتئ الوسع پامال کیا جا رھا ھے.

    وانا میں FCR کالےقا نون کے تحت ڈاکٹر نور حسن وزیر ( آئی سپشلسٹ) کو بھی حوالات میں بند کر دیا گیاجوپولیٹکل انتظامیہ کا قابل مذمت اور شرمناک فعل ہے..پی ڈی اے کا حکومت سے مطالبہ ہے کہ ڈاکٹر نور حسن وزیر کو فی الفور رہا کیا جائے (Pakistan Doctor Association) PDA

تبصره وليکئ

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.